PM Modi’s Historic Address: پی ایم مودی کا تاریخی خطاب-ہندوستان اور اس کی تہذیب کے لیے ایک نیا دور

پی ایم کا خطاب نہ صرف رام مندر کی تعمیر کے طویل انتظار کا جشن تھا بلکہ ان کے سیاسی نظریے اور فلسفے کا بھی عکاس تھا۔ انہوں نے بھگوان رام کے آدرشوں پر زور دیا، جو راستبازی، انصاف اور ہمدردی کے مظہر کے طور پر قابل احترام ہیں۔

January 25, 2024

پی ایم مودی کا تاریخی خطاب-ہندوستان اور اس کی تہذیب کے لیے ایک نیا دور

22 جنوری 2024 کو ایودھیا میں رام مندر کے افتتاح کے موقع پر وزیر اعظم نریندر مودی کا خطاب ہندوستان اور اس کی عوام کے لیے ایک تاریخی لمحہ تھا۔ پی ایم نے اس واقعہ کو ہندوستانی تہذیب کی تاریخ میں ایک نئے دور کا آغاز قرار دیا، جہاں ملک غلامی کے طوق اور تسکین کی ذہنیت سے آزاد ہوا ہے۔ انہوں نے ایک جدید، جامع اور خوشحال قوم کے طور پر ہندوستان کے بارے میں اپنے وژن کا خاکہ بھی پیش کیا، جہاں ہر شہری کو مساوی حقوق اور عزت نفس حاصل ہے۔

پی ایم کا خطاب نہ صرف رام مندر کی تعمیر کے طویل انتظار کا جشن تھا بلکہ ان کے سیاسی نظریے اور فلسفے کا بھی عکاس تھا۔ انہوں نے بھگوان رام کے آدرشوں پر زور دیا، جو راستبازی، انصاف اور ہمدردی کے مظہر کے طور پر قابل احترام ہیں، اور کہا کہ ان کی زندگی اور تعلیمات ہر ہندوستانی کے لیے تحریک کا ذریعہ ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ رام مندر ہندوستان کے فلسفہ اور قومی شعور کی علامت ہے، اور یہ ملک کے اتحاد اور تنوع کی نمائندگی کرتا ہے۔

وزیر اعظم نے سماجی ہم آہنگی اور قومی یکجہتی کی اہمیت پر بھی زور دیا، اور کہا کہ مندر قانون اور سپریم کورٹ کے فیصلے کے مطابق بنایا گیا تھا۔ انہوں نے ہندوستانی معاشرے کی پختگی اور دانشمندی کی تعریف کی جس نے دہائیوں سے جاری تنازعہ کو پرامن اور خوش اسلوبی سے حل کیا۔ انہوں نے کہا کہ مندر نہ صرف عبادت کی جگہ ہے، بلکہ ایک ثقافتی اور تعلیمی مرکز بھی ہے، جہاں ہندوستان کی اقدار اور روایات کی تشہیر کی جائے گی۔

پی ایم نے مندر کو ایک خود انحصار اور پراعتماد ہندوستان کے اپنے وژن سے بھی جوڑا، جو دنیا میں اپنا صحیح مقام حاصل کرنے کے لیے تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ مندر اجتماعی ارادے اور عزم کی طاقت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ انہوں نے کہا کہ مندر قوم کو ہر چیلنج پر قابو پانے اور ہر مقصد کو حاصل کرنے کی ترغیب دے گا۔

وزیر اعظم کے خطاب میں یہ تھے دیگر اہم نکات

پی ایم نے رامائن کے کئی کرداروں اور اقساط کا حوالہ دیا، جیسے شبری، نشاد بادشاہ گو، جٹایو، اور گلہری، عقیدت، دوستی، قربانی اور خدمت کی ان اقدار کو واضح کرنے کے لیے جنہیں بھگوان رام نے مجسم اور متاثر کیا۔ انہوں نے مندر کے احاطے میں سیتا کو راون سے بچانے کی کوشش کرنے والے افسانوی پرندے جٹایو کے مجسمے کی بھی نقاب کشائی کی۔

پی ایم نے مختلف سنتوں، پیروکاروں، لیڈروں اور کارکنوں کے تعاون کو یاد کیا جنہوں نے رام مندر کے مقصد کے لیے اپنی زندگی وقف کر دی، اور انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ انہوں نے تنازعہ کے پرامن حل میں سہولت فراہم کرنے میں عدلیہ، حکومت اور سول سوسائٹی کے کردار کا بھی اعتراف کیا۔

وزیر اعظم نے ہندوستان کے ثقافتی اور روحانی ورثے کے لیے مندر کی اہمیت پر روشنی ڈالی، اور کہا کہ یہ بھگوان رام کی زندگی اور تعلیمات پر سیکھنے اور تحقیق کا مرکز ہوگا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ مندر ہندوستان کے قدیم فن، فن تعمیر اور دستکاری کی نمائش کرے گا۔

پی ایم نے مندر کو ‘نیو انڈیا’ کے اپنے وژن سے جوڑا، جو خود انحصاری، جامعیت اور بااختیار بنانے کے اصولوں پر مبنی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مندر قوم کو غریبوں، کسانوں، خواتین، نوجوانوں اور سماج کے پسماندہ طبقات کی فلاح و بہبود کے لیے کام کرنے کی ترغیب دے گا۔

وزیر اعظم نے ایک ذمہ دار اور بااثر عالمی کھلاڑی کے طور پر ہندوستان کے کردار پر بھی زور دیا اور کہا کہ مندر دنیا کو امن، ہم آہنگی اور بھائی چارے کا پیغام دے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان اقوام متحدہ کے نظریات اور انسانیت کی فلاح و بہبود کا پابند ہے۔

مجموعی طور پر، وزیر اعظم کا خطاب ان کے عالمی نظریہ اور ہندوستان کے لیے ان کی خواہشات کا ایک طاقتور اور فصیح اظہار تھا۔ یہ امید اور رجائیت، فخر اور وقار، آستھا اور عقیدت کا پیغام تھا۔ یہ ایک ایسا پیغام تھا جو لاکھوں ہندوستانیوں کے ساتھ گونج رہا تھا، جنہوں نے مندر کو اپنے خوابوں کی تکمیل اور اپنی شناخت کے مظہر کے طور پر دیکھا۔ یہ ایک ایسا پیغام تھا جس نے دنیا کو یہ بھی پہنچایا کہ ہندوستان ایک متحرک جمہوریت ہے، جہاں ماضی اور حال ہم آہنگی کے ساتھ ساتھ رہتے ہیں اور جہاں مستقبل روشن اور امید افزا ہے۔

-بھارت ایکسپریس